پاکستانی فوج کا روسی کوہ پیما کی جان بچانے پر ”آرڈر آف فرینڈ شپ” کا اعزاز۔

حال ہی میں پاکستان کی بہادر فوج نے ملک کے شمال میں ایک پہاڑ پر کئی دنوں سے پھنسے روسی کوہ پیما کی قیمتی جان بچا کر ایک قابل فخر کارنامہ سر انجام دیا ہے۔ اس طرح کا واقعہ پاکستان کی تاریخ میں پہلی مرتبہ ہے کہ سطح سمندر سے بیس ہزار فٹ سے زائدکی بلندی پر ریسکیو آپریشن سر انجام دیا گیا ہے۔

یہی نہیں بلکہ اسلام آباد میں پاکستان کا خصوصی شکریہ ادا کرتے ہوئے روس کے سفیر الگژے دیدوو نے کہا ہے کہ پاک آرمی کے ہوا بازوں نے اپنی جان خطرے میں ڈال کر روسی کوہ پیما کو بچایا ہے جو کہ روس کے کوہ پیما کی جان بچانے پر پاکستان کے شکر گزار ہیں مزید ان کا کہنا تھا کہ پاکستانی فوج اور پاکستانیوں کو سلام پیش کرتا ہوں۔

میڈیا اور نیوز ایجنسی روئٹرز کی جانب سے شائع ہونے والی رپورٹ کے مطابق روسی کوہ پیما الیگزنڈر گوکوو کو جس پہاڑ سے ریسکیو کیا گیا اسکا نام لاتوک ون نامی تھا۔ اس کوہ پیما کا ساتھی پہلے ہی ہلاک ہو چکا تھا ۔ کئی مرتبہ پاکستان فوج کی جانب سے کوششوں کے بعد بالآخر روسی کوہ پیما کو بچا لیا گیا۔ گزشتہ بدھ کو الیگزنڈر اور ان کے ساتھی کوہ پیما سرگئی گلازاوناو پہاڑ کو سر کرنے کے بعد نیچے آنے کے راستے کے سفر میں تھے جبکہ ایک ساتھی اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھے۔

روس کے صدر ولادی میر پیوٹن نے روسی کوہ پیما ایلگزینڈر گوکوف کو ریسکیو کرنے والے 4 پاکستانیوں کو آرڈر آف فرینڈشپ’ اعزاز سے نواز ہے۔ اور اسکے علاوہ روس کے سرکاری اخبار رشین گزٹ میں چار قابل فخر پاکستانیوں قاضی محمد، عابد رفیق، محمد انزہم رفیق اور فخر عباس کو روسی کوہ پیما کو بچانے کے لیے کیے گئے آپریشن میں حصہ لینے پر آرڈر آف فرینڈشپ اعزاز سے نوازا گیا۔

پاکستان الپائن کلب کے سکریٹری قرار حیدری کا کہنا ہے،’’ الیگزانڈر نے ایک ’ایس او ایس‘ پیغام بھیجا تھا اور اسے ریسکیو کیے جانے کی امید دلائی گئی اور اسے کہا گیا کہ وہ انتظار کرے۔ اس نے اپنے گرد برف کی ایک ڈھال تعمیر کر لی تھی اور اس نے سیٹیلائٹ کے ذریعے رابطہ قائم رکھا۔

اس روسی کوہ پیما کو منگل کی صبح ہیلی کاپٹر کی مدد سے بچا لیا گیا اور اسکردو کے ایک ہسپتال میں پہنچا دیا گیا ہے۔اور دوسری طرف فوج کا کہنا ہے کہ خراب موسم کے باعث وہ اسے پہلے ریسکیو نہیں کر پا رہے تھے۔

پاکستان کو کوہ پیماؤں کی جنت کہا جاتا ہے لیکن یہاں انتہائی سخت اور خطرناک پہاڑوں پر کئی کوہ پیما اپنی جان بھی کھو بیٹھتے ہیں۔ ماضی میں بھی کئی مرتبہ پاکستان کی فوج نے ریسکیو آپریشن کر کے کوہ پیماؤں کی جان بچائی ہے اور پاکستان کا نام روشن کیا ہے۔

بدھ کو روس کے سفیر الگژے دیدوو نے سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ روس کے کوہ پیما کی جان بچانے پر پاکستان کے شکر گزار ہیں۔ پاکستانی فوج اور پاکستانیوں کو سلام پیش کرتا ہوں۔پاک آرمی کے ہوا بازوں نے اپنی جان خطرے میں ڈال کر روسی کوہ پیما کو بچایا. ایس سی او کا حصہ بننے کے بعد روس کے لئے پاکستان کی ا ہمیت مزید بڑھ گئی ہے۔ دونوں ملک افغانستان میں دیرپا امن کے خواہاں ہیں۔ روسی سفیر کا کہنا تھا کہ دہشت گردی کے لئے معلومات کا تبادلہ اور تربیتی امور میں تعاون کررہے ہیں۔

Comments
Loading...